نعت

دھوپ درپےرہی سورج کےجہاں میں آ کر

امن پایا ترے سائے کی اماں میں آ کر

چشمِ امکاں سے کتنےہی مسافر گزرے

تجھ سا ٹھہرا نہ مکیں اور مکاں میں آ کر

تری رحمت پہ یقیں نے سفر آسان کیا

ذہن بھٹکا نہ کبھی دشتِ گماں میں آ کر

جب چلا ذکر ترے لحن کی شیرینی کا

ہو گئے شیروشکرلفظ بیاں میں آ کر

دیدنی جوشِ طبیعت سے تری باتوں میں

نؤ رکتی ہی نہیں آبِ رواں میں آ کر

یاد بھی زخم پہ مرحم کی طرح ہے تیری

راحتیں بانٹتی ہےقلبِ تپاں میں آ کر

تجھ کو للکار کے بچ کرکوئی جاتا کیسے

بن گیا تیر، قضاتیری کماں میں آ کر

تیرےگلزار سے جاتی ہی نہیں فصلِ بہار

گرچہ ہر باغ رہادامِ خزاں میں آ کر

 

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *